☰  
× صفحۂ اول (current) سنڈے سپیشل دنیا اسپیشل عالمی امور صحت کیرئر پلاننگ خواتین کچن کی دنیا دین و دنیا فیشن انٹرویوز ادب
پردے کا حکم

پردے کا حکم

تحریر : مفتی عمرپالن پوری

03-24-2019

قرآن پاک میں اللہ تعالیٰ کاارشاد ہے : ترجمہ:’’ اے نبی ! اپنی بیویوں سے اور اپنی صاحب زادیوں سے اور مسلمانوں کی عورتوں سے کہہ دو کہ وہ اپنے اوپر اپنی چادر لٹکا لیا کریں۔‘‘ (سورئہ احزاب : آیت ۵۹) جَلَابِیْب، جَلْبَابٌکی جمع ہے ۔

جو ایسی بڑی چادر کو کہتے ہیں جس سے پورا بدن ڈھک جائے ، اپنے اوپر چادر لٹکانے سے مراد اپنے چہرے پر اس طرح گھونگھٹ نکالنا ہے کہ جس سے چہرے کا بیشتر حصہ بھی چھپ جائے اور نظریں جھکا کر چلنے سے اسے راستہ بھی نظر آتا جائے ،پاک وہند یا دیگر اسلامی ممالک میں برقعہ کی جو مختلف صورتیں ہیں ، عہد رسالت میںیہ برقعے عام نہیں تھے پھر بعد میں معاشرت میں وہ سادگی نہیں رہی جو عہد رسالت اور صحابہ وتابعین کے دور میں تھی،

عورتیں نہایت سادہ لباس پہنتی تھیں بنائو سنگھار اور زیب وزینت کے اظہار کا کوئی جذبہ ان کے اندر نہیں ہوتاتھا ، اس لیے ایک بڑی چادر سے بھی پردے کے تقاضے پور ے ہوجاتے تھے ،لیکن بعد میںیہ سادگی نہیں رہی ، اس کی جگہ تجمل اور زینت نے لے لی اور عورتوں کے اندر رزق برق لباس اور زیورات کی نمائش عام ہوگئی جس کی وجہ سے چادر سے پردہ کرنا مشکل ہوگیااور اس کی جگہ مختلف انداز کے برقعے عام ہوگئے گو اس سے بعض دفعہ عورت کو بالخصوص سخت گرمی میںکچھ دقت بھی محسوس ہوتی ہے لیکن یہ ذرا سی تکلیف شریعت کے تقاضوں کے مقابلہ میں کوئی اہمیت نہیں رکھتی ،

تاہم جو عورت برقعے کی بجائے پردے کے لیے بڑی چادر استعمال کرتی ہے اور پورے بدن کو ڈھانکتی اور چہرے پر صحیح معنوںمیں گھونگھٹ نکالتی ہے ، وہ یقینا پردے کے حکم کو بجالاتی ہے ، کیونکہ برقع کی کوئی مخصوص شکل ایسی لازمی شے نہیں ہے جسے شریعت نے پردے کے لیے لازمی قراردیا ہو ، لیکن آج کل عورتوں نے چادر کو بے پردگی اختیار کرنے کا ذریعہ بنالیا ہے ، پہلے وہ برقع کی جگہ چادر اوڑھنا شروع کرتی ہیں ، پھر چادر بھی غائب ہوجاتی ہے صرف دوپٹہ رہ جاتاہے اور بعض عورتوں کے لیے اس کالینا بھی گراں ہوتاہے ۔

اس صورت حال کو دیکھتے ہوئے کہنا پڑتا ہے کہ اب برقع کا استعمال ہی صحیح ہے کیونکہ جب سے برقع کی جگہ چادر نے لی ہے ، بے پردگی عام ہوگئی ہے۔ اس آیت میںحضرت نبی کریم ﷺ کی بیویوں ، بیٹیوں اور عام مومن عورتوں کو گھر سے باہر نکلتے وقت پردے کا حکم دیا گیا ہے جس سے واضح ہے کہ پردے کا حکم علماء کا ایجاد کردہ نہیں ہے جیساکہ آج کل بعض لوگ باور کراتے ہیں یا اس کو قرار واقعی اہمیت نہیں دیتے بلکہ یہ اللہ تعالیٰ کا حکم ہے جو قرآن کریم سے ثابت ہے اس لیے اعراض انکار اور بے پردگی پر اصرار کفر تک پہنچا سکتاہے۔

مزید پڑھیں

حضرت عبداللہ بن عباس ؓبیان کرتے ہیں کہ ایک دن آپؐ کے پیچھے سواری پر بیٹھا ہوا تھا کہ حضرت رسول اللہ ﷺ نے نصیحتیں فرمائیں۔

...

مزید پڑھیں

حضرت رسول اللہﷺ نے فرمایا،ترجمہ ’’بے شک اللہ کی مدد صبر کے ساتھ ہوتی ہے۔‘‘ اللہ رب العزت نے سورۂ محمد کی ساتویں آیت میں ارشا ...

مزید پڑھیں

گذشتہ شماروں سے پڑھیں

حضرت ابو ہریرہ ؓکہتے ہیں کہ آنحضرت ﷺ نے فرمایا : 

’’ ہر بچہ اپنی فطرت (یعنی اسلام ) پر پیدا ہوتا ہے ، پھر اس کے والدین اسے یہود ...

مزید پڑھیں

 {عن عبداللہ بن عمرؓ وقال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم قد افلح من اسلم ورزق کفافا وقنعہ اللہ بما اتاہ}(رواہ مسلم)

...

مزید پڑھیں

بچے کی ولادت سے لے کر آخر وقت تک والدین کو کن باتوں کا دھیان کرنا ہوگاکہ والدین اللہ تعالیٰ کے ہاں اس عظیم امانت کی خیانت کے جرم کے مرتکب ...

مزید پڑھیں