☰  
× صفحۂ اول (current) سنڈے سپیشل دنیا اسپیشل عالمی امور صحت کیرئر پلاننگ خواتین کچن کی دنیا دین و دنیا فیشن انٹرویوز ادب
دل آئینہ ہے تو چہرہ گلاب جیسا ہے ۔۔۔۔۔

دل آئینہ ہے تو چہرہ گلاب جیسا ہے ۔۔۔۔۔

تحریر : طیبہ بخاری

03-24-2019

زاریا کہتی ہیں زندگی کو سدا بہار کی طرح گزارنا چاہئے ، ایسی بہار جس میں کبھی کسی خزاں کا خوف نہ ہو۔ہم کبھی کبھار ناراضگیوں اور اداسیوں میں اس قدر آگے بڑھ جاتے ہیں کہ اپنی زندگی کی خوبصورتیوں کو خود اپنے ہی ہاتھوں یا اپنی ہی سوچوں کے ذریعے خزا ں کے حوالے کر چھوڑتے ہیں ۔

احمد فرازنے کیا خوب کہا تھا کہ

 

بدن میں آگ ہے چہرہ گلاب جیسا ہے

وہ سامنے ہے مگر تشنگی نہیں جاتی

یہ کیا ستم ہے کہ دریا سراب جیسا ہے

کہاں وہ قرب کہ اب تو یہ حال ہے جیسے

مگر کبھی کوئی دیکھے کوئی پڑھے تو سہی

دل آئینہ ہے تو چہرہ گلاب جیسا ہے

بہارِ خوں سے چمن زار بن گئے مقتل !

جو نخل دار ہے شاخِ گلاب جیسا ہے

فراز سنگِ ملامت ہے زخم زخم سہی

ہمیں ایسا بالکل نہیں کرنا چاہئے، زندگی کی حفاظت پھولوں کی طرح کرنی چاہئے ، قدرت کے اس حسین تحفے کی جتنی بھی قدر کی جائے کم ہے ۔ اپنے بارے میں صرف اتنا کہنا چاہوں گی کہ ہمیشہ خوش رہتی ہوں، اداسیوں سے نفرت ہے، کبھی کسی شے کی محرومی کو اپنی سوچوں پر حاوی ہونے نہیں دیا۔ آپ سب سے بھی یہی درخواست ہے کہ زندگی کی قدر کریں ، اپنے پیاروں کا خاص خیال رکھیں ،

گھر والوں کیساتھ مل کر خوب خوشیاں منائیں اور نفرتوں کو دور بھگائیں ۔ یقین جانئے جب دل آئینے کی طرح صاف ہو ں تو چہرے خود بخود گلاب ہو جاتے ہیں۔ رہی بات ملبوسات کی تو جب دل کی دنیا خوبصورت اور خوشیوں سے بھری ہو تو پھر آپ کو رنگوں کی سلیکشن کیلئے زیادہ محنت نہیں کرنی پڑتی آپ جو بھی پہنیں گی سب سوٹ کرے گا۔ آج آپ سب سے ملاقات کیلئے میں نے چند پارٹی ڈریسز کا انتخاب کیا ہے ، امید ہے آپ کو میرا انتخاب ضرور پسند آئیگا ۔

گذشتہ شماروں سے پڑھیں

قتیل شفائی نے کیا خوب کہا تھا کہ

نگاہوں میں خمار آتا ہوا محسوس ہوتا ہے ...

مزید پڑھیں

ادا جعفری نے کیا خوب کہا تھا کہ

محبت ایک راز ہے !

مزید پڑھیں

سعدیہ کہتی ہیں ’’ جو کلام آپ نے پیش کیا اور جس قدر میں لفظ ، کردار یا وجود ِعورت کو سمجھ پائی ہوں وہ یہ ہے کہ عورت خدائے بزرگ و برتر ک ...

مزید پڑھیں