☰  
× صفحۂ اول (current) دین و دنیا( مولانا سید ابوالاعلیٰ مودودی ؒ) انٹرویوز(مرزا افتخاربیگ) دنیا اسپیشل( سید ظفر ہاشمی/ اسلام آباد ) متفرق(احمد صمد خان ) سپیشل رپورٹ(ایم آر ملک) رپورٹ(ایم ابراہیم خان ) سنڈے سپیشل(طیبہ بخاری ) فیشن(طیبہ بخاری ) کچن کی دنیا() کھیل(طیب رضا عابدی ) خصوصی رپورٹ(محمد ندیم بھٹی) صحت(حکیم قاضی ایم اے خالد) غور و طلب(امتیازعلی شاکر) شوبز(مرزا افتخاربیگ) خواتین(نجف زہرا تقوی) دنیا کی رائے(ظہور خان بزدار)
روزہ کورونا سے بچاؤ میں فائدہ مند

روزہ کورونا سے بچاؤ میں فائدہ مند

تحریر : حکیم قاضی ایم اے خالد

04-26-2020

 دنیا کے ایک ارب سے زائد مسلمان اسلامی و قرآنی احکام کی روشنی میں بغیر کسی جسمانی و دنیاوی فائدے کاطمع کئے تعمیلاًروزہ رکھتے ہیں تاہم روحانی تسکین کے ساتھ ساتھ روزہ رکھنے سے جسمانی صحت پر بھی مثبت اثرات مرتب ہوتے ہیں جسے دنیا بھر کے طبی ماہرین نے متعدد کلینیکل ٹرائلز کے بعد سائنسی طور پر تسلیم کیا ہے۔

 

 

 روزہ رکھنے سے نہ صرف مدافعتی نظام مضبوط ہوتا ہے بلکہ بحیثیت مجموعی قوتِ مدافعت کے اندر زبردست اضافہ ہوجاتا ہے جس کے نتیجے میں انسان کے جسم میں بیماریوں سے بچنے کی صلاحیت بھی پیدا ہوجاتی ہے اور جو بیماریاں جسم کے اندر موجود ہوتی ہیں ان سے بھی چھٹکارا حاصل کیا جا سکتاہے۔ ہمارے جسم میں موجود قوتِ مدافعت کا کام جسم کو جراثیم اور ہر قسم کے وائرسزسے بچانا ہے جب بھی جسم پر جراثیم حملہ آور ہوتے ہیں یا کوئی بیماری جسم میں داخل ہوتی ہے تو جسم کے اندر موجود امیون سسٹم متحرک ہو جاتا ہے۔ سینکڑوں قسم کے دفاعی خلیات ہیں جو اس مدافعتی نظام میں حصہ لیتے ہیں اور روزے ان تمام مدافعتی مورچوں کو مضبوط کرتے ہیں۔ جسم میں ایک خاص قسم کے خلئے ہوتے ہیں جو امینو گلوبن کہلاتے ہیں انکی کئی اقسام ہیں ان سب کا کام جسم کو مدافعت فراہم کرناہے روزے رکھنے سے امینو گلوبن کی مقدار اور ان کی سطح بڑھ جاتی ہے بالخصوص جو IGEکہلاتے ہیں اور بالعموم بیماریوں کے خلاف دفاعی فرنٹ لائن کا کام کرتے ہیں۔لہٰذا روزہ کورونا وائرسCovid-19 سے بچاؤ میں بھی ڈیفنس لائن کا کردار ادا کر سکتا ہے۔
یونیورسٹی آف کیلیفورنیا کے جیرونٹولوجی اور حیاتیاتی علوم کے پروفیسر ویلٹر لانگو کے مطابق روزہ مدافعتی نظام کی تعمیر نو کر دیتا ہے۔روزہ رکھنے سی سیلز ٹوٹتے ہیں اور پھر از سرنو پیدا ہو جاتے ہیں۔پروفیسر لونگو کہتے ہیں ہم نے انسانوں اور جانوروں پر کئے جانے والے تجربات میں یہ دیکھا کہ طویل روزوں سے جسم میں سفید خون کے خلیات کی تعداد میں کمی ہونی شروع ہو گئی مگر جب روزہ کھولا گیا تو یہ خلیات پھر سے واپس آگئے اور تبھی سائنسدانوں نے یہ سوچنا شروع کیا کہ آخر یہ واپس کہاں سے آتے ہیں ۔ بقول پروفیسر لونگو طویل روزوں کی حالت کے دوران جسم میں سفید خون کے خلیات کی کمی سے پیدا ہونے والی حوصلہ افزا تبدیلیاں اسٹیم سیلز کے تخلیق نو کے خلیہ کو متحرک بناتی ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ جب انسان روزے کے بعد کھانا کھاتا ہے تو اس کا جسم پورے نظام کی تعمیر کے لیے اسٹیم خلیات کو سگنل بھجتا ہے اور توانائی محفوظ کرنے کے لیے مدافعتی نظام خلیات کے ایک بڑے حصے کو ری سائیکل کرتا ہے جن کی یا تو ضرورت نہیں ہوتی ہے یا جو ناکارہ ہو چکے ہوتے ہیں۔پروفیسر لونگو نے کہا کہ ایسے شواہد نہیں ملے جن کی وجہ سے فاسٹنگ کو خطرناک قرار دیا جائے بلکہ اس کے فائدہ مند ہونے کے حوالے سے ٹھوس شواہد سامنے آئے ہیں۔ محققین نے کہا کہ وہ ان امکانات کی بھی تحقیقات کر رہے ہیں کہ آیا روزے کے مفید اثرات صرف مدافعتی نظام کی بہتری کے لیے ہیں یا پھر اس کے اثرات دیگر نظاموں اور اعضا پر بھی لاگو ہوتے ہیں۔
دی ٹیلی گراف میں شائع ہونے والے ایک مضمون میں یو ایس سی نورس کمپری ہینسیوکینسر ہسپتال ‘کلینکل میڈیسن شعبہ کی اسسٹنٹ پروفیسر تانیا ڈورف کا کہنا ہے کہ کیمو تھراپی کا عمل اگرچہ جانوں کو بچاتا ہے تاہم یہ جسمانی مدافعتی نظام کو انتہائی نقصان پہنچاتا ہے لیکن روزہ رکھنے کا عمل انسانی قوت مدافعت میں اضافہ کر کے کیموتھراپی کے نقصانات کو کم کرنے کا باعث بنتا ہے۔
جدید طبی تحقیقات کے مطابق روزہ رکھنے سے انفیکشن یعنی تعدیہ کا عمل بھی کم ہو جاتا ہے۔لہٰذا روزہ رکھنے سے کورونا وائرس سمیت متعدی امراض سے بھی محفوظ رہا جا سکتا ہے۔
لوگوں میں یہ غلط العام ہے کہ روزے رکھنے سے کمزوری ہو جاتی ہے اور کہیں اس سے کورونا وائرس میں مبتلاء ہونے کا خطرہ نہ ہو ۔اس حوالہ سے ترکی کے محکمہ مذہبی امور کے جاری کردہ اعلامیہ میں زور دیا گیا ہے کہ روزہ رکھنے اور وائرس کے پھیلا ؤکے درمیان کوئی خطرہ نہیں پایا جاتا۔علاوہ ازیں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ روزہ رکھنے سے قوتِ مدافعت میں کمزوری آنے کے حوالے سے کوئی طبی دلیل موجود نہیں بلکہ اس کے بر عکس روزے کے قوت مدافعت پر مثبت اثرات پیداکرنے اور امیون سسٹم طاقتور ہونے کے حوالے سے متعددسائنسی تحقیقات و مقالوں (ریسرچ پیپرز)کا وجود ملتا ہے۔
دنیا میں کی گئی متعدد طبی تحقیقات نے ثابت کیا ہے کہ روزہ رکھنے سے قوتِ مدافعت بہتر ہو جاتی ہے۔ ہمارا جسم ایک مدافعتی نظام کے تحت چل رہا ہے۔ جسم کی قوتِ مدافعت ہمیں بیماریوں سے بچا کر صحت مند رکھتی ہے۔ اس قوت مدافعت کو بہترکرنے کے طریقوں میں سے ایک طریقہ روزے رکھنا بھی ہے۔ انسان صبح سے شام تک بھوکا پیاسا رہتا ہے تو اس کے جسم کے اندر وہ خلئے متحرک ہو جاتے ہیں جو اس کے مدافعتی نظام کو بہتر بنا کر اس کو طرح طرح کی بیماریوں سے بچاتے ہیں۔ اگر بیماری جسم میں پہلے سے موجود ہو تو روزے اس کے صحت یاب ہونے کی رفتار میں اضافہ کر دیتے ہیں۔
کورونا وائرس کی مہلک وبا کے اس نازک دور میں اللہ پاک رمضان المبارک کا مقدس مہینہ بھی ہمیں عطاکر رہے ہیں تو اس سے مستفید ہونا چاہئے اور روزوں کا اہتمام کرکے ایمانی وجسمانی طور پر مضبوط بن کر کورونا وائرس کے خلاف اہم کردار ادا کرنا چاہئے۔
 

گذشتہ شماروں سے پڑھیں

 وضو سے کورونا وائرس کا خاتمہ ممکن ہے اگر ہم اپنی زندگی کودین اسلام کے زریں اصولوں کے مطابق گزاریں تو کوروناسمیت دنیاکے ہر وائرس سے بچا جا سکتا ہے۔اسلام نے صفائی کو نصف ایمان قرار دیا ہے جب ہم اپنی زندگی میں صفائی لے آئیں گے تو آدھی سے زیادہ بیماریاں بغیر کسی علاج کے ہی ختم ہو جائیں گی۔ جدیدطبی تحقیقات کے مطابق اگر کوئی دن میں پانچ بار وضو کرتا ہے تو وہ کئی بیماریوں سے محفوظ رہتا ہے۔وضو کے طریقے کو دیکھا جائے اور سائنسی بنیادوں پر اس کو پرکھا جائے تو حیرت انگیز انکشافات ہوتے ہیں۔

مزید پڑھیں

 عبادت کی نیت سے اور پابندی اوقات کے ساتھ کھانے پینے اور جنسی خواہشات سے باز رہنے کو روزہ کہا جاتا ہے۔ طبی اصطلاح میں غذا کو کیفیت یا کمیت کے لحاظ سے محدود کرنے کو روزہ کہہ سکتے ہیں۔سائنس کی ترقی اور طبی تحقیقات نے یہ بات ثابت کر دی ہے کہ انسان کی شخصیت ایک کل ہے اور طبیعت انسانی کے افعال و وظائف نفس اور جسم دونوں پر اثرانداز ہوتے ہیں۔ 

مزید پڑھیں

 کرونا وبا ء نے جہاں پوری دنیا کومتاثرکیاہے وہاں ہماری ریاست، سیاست اورمعاشرت پربھی گہرے اثرات مرتب کئے ہیں۔ ایسادکھائی دیتاہے کہ اس سے پاکستانی ریاست کی شکل میں تبدیلی ناگزیر ہے۔    

مزید پڑھیں