☰  
× صفحۂ اول (current) دین و دنیا(مولانا محمد الیاس گھمن) صحت(ڈاکٹر فراز) خصوصی رپورٹ(عبدالماجد قریشی) سنڈے سپیشل(طیبہ بخاری ) فیشن(طیبہ بخاری ) کچن کی دنیا() تاریخ(ایم آر ملک) غور و طلب(پروفیسر عثمان سرور انصاری) فیچر(نصیر احمد ورک) انٹرویوز(مرزا افتخاربیگ) کھیل(عبدالحفیظ ظفر) متفرق(عبدالمالک مجاہد) روحانی مسائل(مولانا محمد یونس پالن پوری)
جھانوی کپور کی سفارش پر بھارتی فلم ملی تھی! ماڈل ، فلم و ٹی وی اسٹار اور پروڈیوسر عدنان صدیقی

جھانوی کپور کی سفارش پر بھارتی فلم ملی تھی! ماڈل ، فلم و ٹی وی اسٹار اور پروڈیوسر عدنان صدیقی

تحریر : مرزا افتخاربیگ

02-02-2020

بھارتی چینل پر پاکستانی ٹی وی ڈراموں کی مقبولیت میں دن بدن اضافہ سے پاکستانی ٹی وی کے فنکاروں کو بھارت میں ایک نئی شناخت ملنے لگی تھی ۔ اس حوالے سے ایک دلچسپ تجربہ سے چند ماہ قبل ٹی وی اداکار عدنان صدیقی کواپنی فیملی کے ساتھ دوبئی کے شاپنگ مال میں گذرنا پڑا ۔

وہاں بھارتی لڑکے اور لڑکیوں نے ان کو گھیر لیا۔ان کا کہنا تھا کہ آپ ہماری فلموں میں کام کیوں نہیں کرتے؟آپ کے ڈرامے ’’مات‘‘ اور ’’میرے قاتل میرے دلدار‘‘دیکھ کر احساس ہواہے کہ ہماری فلموں کے مقابلے میں آپ کے ٹی وی ڈرامے زندگی سے زیادہ قریب تر ہیں۔عینی شاہدین کے مطابق عدنان کو بڑھتے ہوئے ہجوم سے بچانے کے لئے مال کی سیکورٹی کو طلب کرنا پڑا تھا۔ ان کومال والوں نے سکیورٹی کے ساتھ پروٹوکول بھی فراہم کیا۔ عدنان صدیقی کا کہنا تھا کہ ’’ میں خود حیران تھا کہ انہوں نے مجھے کیسے پہچان لیاتھا‘‘؟ انہیں بھارتی فلموں میں کام کرنیکی آفرز مل چکی تھی۔وہ ایک بڑے ادارے کی فلم کی آفر ٹھکرا چکے تھے۔ پاکستانی ڈراموں کی بھارتی چینل پر نشر ہونے سے کئی بھارتی فلمساز رابطہ کرچکے تھے۔ ہدایتکار شانو شرما اپنی فلم میں ویلن کا کردار دینا چاہتے تھے ۔ ٹی وی سیریلز میں منفی کرداروں کو دیکھ کر وہ خاصے متاثرہوئے تھے ۔وہ اور عرفان خان ہالی ووڈ کی فلم میں ہالی وڈ کوئن انجلینا جولی کے ساتھ کئی برس قبل کام کرچکے ہیں۔

عدنان صدیقی نے ملکی ڈرامہ انڈسٹری کی کامیاب ترین ڈرامہ سیریل ’’ میرے پاس تم ہو‘‘ میں منفی کردار میں حقیقت نگاری کے رنگ بھر کر کمال کردیا ہے ، شہوار کے کردار میں اپنی عمدہ پرفارمنس سے رنگ جمایا ہے اس کے چرچے چار سو ہیں۔بقول ڈرامہ رائٹر خلیل الرحمان قمر شہوار کا کردار عدنان صدیقی کے علاوہ کوئی اور نہیں کرسکتا تھا۔ اس نے ثابت کیا ہے کہ وہ ہیرو ہی نہیں ہر قسم کے کردار ادا کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔’’ میرے قاتل میرے دلدار‘‘ ،’’مات ‘‘،’’ پت جھڑ کے بعد‘‘،’’ ہم نشین‘‘اور’’میرے پاس تم ہو‘‘ان میں ہر ایک میں نیا عدنان صدیقی نظر آیا جس نے وہ عروج پایا ہے کہ اب ا ن کے ہمعصر فنکار گھروں میں بیٹھ گئے ہیں ۔

ماڈل ، اداکار اور پروڈیوسر عدنان صدیقی کے کیریئر پر ایک طاہرانہ نظر ڈالی جائے تو ایسا محسوس ہوتا ہے کہ انہیں نوعمری سے ہی شوبز انڈسٹری سے دلچسپی تھی ۔ 23 ، اکتوبر 1969 ء کو لاہور میں جنم لینے والے فنکارعدنان صدیقی نے سینٹ پیٹرک ہائی اسکول کراچی سے تعلم مکمل کی ، والد اترپردیس سے لاہورآئے ،بعدازاں کراچی شفٹ ہوگئے ، تعلیم سے فراغت کے بعد 1988 ء سے ہی فیشن کی دنیا میں نام بنانے کے لئے کوششیں شروع کردیں ، 1989 ء میں پہلا کمرشل کیا اور پھر ماڈلنگ کی دنیا میں دیکھتے ہی دیکھتے عدنان صدیقی نے اپنی جگہ بنالی۔بطور ماڈل شہر ت ملنے کے بعد انکو پی ٹی وی کے انفرادی کھیل ’’ امیدوں کی زنجیر ‘‘ میں کام ملا جس کے پروڈیوسر قاسم جلالی تھے ۔1991 ء پیش کئے گئے اس ڈرامے سے عدنان کو جو پذیرائی ملی۔ اس کو دیکھتے ہوئے 1992 ء میں پروڈیوسر قاسم جلالی نے فاطمہ ثریا بجیا کے اسکرپٹ پر مبنی ڈرامہ سیریل ’’ عروسہ ‘‘ میں ہیرو کاسٹ کرلیا ۔اس وقت پی ٹی وی پر کسی سیریل میں پہلی بار اہم کردار ملنا کسی بھی نئے فنکار کے لئے بہت بڑاعزاز ہوتا تھا ،اس سیریل کے نشر ہوتے ہی عدنان صدیقی مقبول ترین فنکاروں میں شمار ہونے لگے۔اس کے بعد سے اب تک وہ کئی ڈراموں، سیریلز اور ٹیلی موویزشکوہ نہ شکایت ہے، پل دو پل ، ہوا ریت اور آنگن ، کالونی 52 ، آئینہ، پیر کامل، ملاقات، اعتراف، امرائو جان ادا، زیب النساء، مہندی، ادھوری محبت، میری ذات ذرہ بے نشان، دوراہا، چھوٹی سی کہانی، وصل ، پارسا، وجود لاریب، منزل، دولہا ویڈ، میری ادھوری محبت، کیسا یہ جنون، سوچا نہ تھا ، شدت، میری جان، دیا جلے، جل پری،محبت روٹھ جائے تو، محبت جائے بھڑ میں ، صندل، ایک تھی پارو،درمیاں ، کبھی کھبی پیار میں ، آہستہ آہستہ، رو برو، میرے ہمدم میرے دوست، جانم ، کتناستاتے ہو، پاکیزہ، کرب، محبت ہو گئی تم سے، دل تیرے نام، خوشبو کا سفر، اعتبار، سمی، گھگھی، بیلا پور کی ڈائن، یہی دل میرا، عشق جنون دیوانگی کے علاوہ ہالی ووڈ مووی اے مائٹی ہارٹ ، بھارتی فلم ’’مام ‘‘ اور پاکستانی فلم ’’ یلغار ‘‘ میں کام کرچکے ہیں ۔ گزشتہ دنوں عدنان صدیقی سے گپ شپ رہی جس کی روداد قارئین کی دلچسپی کے لئے پیش خدمت ہے، 

دنیا:بھارتی اداکارہ سری دیوی جیسی فنکارہ کے ساتھ پہلی ہندی فلم کرنے کا تجربہ کیسا رہا ؟

عدنان: اسے اپنے لیے اعزاز سے کم نہیں سمجھتا کہ اتنی بڑی اسٹار کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا لیکن دیوی جی محض بڑی اسٹار ہی نہیں بلکہ بہترین انسان بھی تھیں اور یہی اہم چیز ہوتی ہے کہ آپ انسان اچھے ہوں! ان کے ساتھ کام کرتے ہوئے کسی بھی لمحے یہ محسوس ہی نہیں ہوا کہ اتنی بڑی ہیروئن کے ہمراہ موجود ہوں۔

دنیا: اپنی فلم انڈسٹری کے بارے میں کیا رائے رکھتے ہیں؟

عدنان: سچی بات ہے کہ ہمیں بہت کچھ سیکھنے کی ضرورت ہے ، ہمیں اپنی غلطیوں سے بھی سیکھنا چاہیے تبھی ہمارا آگے کا سفر کامیابی سے چل سکتا ہے تاہم کسی کی نقالی کرنے کی بجائے فلم میکنگ میں اپنے اسٹائل کو فالو کرنا ضروری ہے جیسا کہ عروج کے دور میں ہماری انڈسٹری کی اپنی ایک پہچان تھی یعنی دنیا سے بہت کچھ سیکھیں لیکن کام ایسا ہو جو ہمارے کلچر اور ماحول کے مطابق ہو نہ کہ بھارت یا کسی اور کی نقالی کی جائے۔

دنیا :بالی وڈ میں پہلی انٹری کا تجربے پر کیا کہنا چاہیں گے؟

عدنان : ’مام‘ میں کام کرنا ایک زبردست تجربہ ثابت ہوا ہے اور اس کے ذریعے بہت کچھ ایسا نیا سیکھنے کو ملا ہے جس سے آنکھیں کھل گئی ہیں اور کام کے حوالے سے جانا ہے کہ ہم لوگوں کو ابھی بہت کچھ نہیں آتا سو یہ پہلی ہندی مووی ہر لحاظ سے زبردست رہی تھی ۔

 دنیا : اس حوالے سے نیا کچھ سیکھا قارئین کو شیئر کرنا چاہیں گے؟

عدنان: بطور ایکٹر اتنا کچھ سیکھا ہے کہ بتا نہیں سکتا مثلاً بالی وڈ والوں میں پروفیشنل ازم غضب کا ہے،اسی طرح کام پر ان کا فوکس اور پروفیشنل ایٹی ٹیوٹ کے ساتھ ساتھ کمٹ منٹ بھی وہ چیزیں ہیں جو ہمارے یہاں عموماً دیکھنے کو نہیں ملتیں،صرف ڈائریکٹر کی بات نہیں کرتا بلکہ مام کی پوری ٹیم میں شامل ایک ایک بندے نے جس طرح اپنی ذمے داریوں کو نبھایا وہ چیز ہمارے یہاں بہت ہی کم دیکھنے کو ملتی ہے‘ اس فلم میں کام کرکے اپنے اندر خاص قسم کا اعتماد محسوس ہوا اور جو کچھ سیکھا ہے اسے اپنے پروجیکٹ میں ضرور استعمال کرنا چاہوں گا۔

دنیا:کیا یہ درست ہے کہ مام میں آپ کی کاسٹنگ سری دیوی کی بیٹی جھانوی کپور کی وجہ سے ممکن ہوئی تھی ؟

عدنان : بالکل ایسا ہی ہے کہ جھانوی کے سبب مجھے لینے پر غور کیا گیا اور یہ بات اس وقت معلوم ہوئی جب شوٹنگ کے لیے بھارت گیا، بات یہ تھی کہ جن دنوں بونی کپور میرے کردار کے لیے ایکٹرز کی تلاش کررہے تھے تو جھانوی نے ڈیڈی کو مجھے لینے کا مشورہ دیا،دراصل وہ میری فلم آمائٹی ہارٹ‘ دیکھ چکی تھی اور میری پرفارمنس سے بے حد متاثر ہوئی تھی سو بیٹی کے کہنے پر بونی جی نے مجھے کال کی اور پھر آڈیشن کے بعد میری کاسٹنگ ہوگئی جب شوٹنگ شروع ہوئی تو جھانوی ہم میں یعنی سجل اور میرے ساتھ بہت گھل مل گئی‘ اکثر وہ ہمیں لنچ و ڈنر کرواتی جس سے ہمارے لیے اس کی پسندیدگی ظاہر ہوتی تھی۔

دنیا: اب بات ہوجائے فلم’’ دم مستم کی‘‘ ،کیا کہیں گے ؟ 

عدنان:ہمیشہ سے ہی چاہتا تھا کہ کوئی کلاسک فلم بناؤںاس فلم میں بہت سی نئی چیزیں کررہا ہوں اور دیکھنے والوں کو جن سے تازگی کا احساس ہوگا‘ اس پلے کی خاطر بہت کچھ سیکھااور اسی طرح کے کئی دوسرے نئے کام کیے ہیں ۔ میرے ساتھ میرے پارٹنر اختر حسنین ہیں ، ہماری کوشش ہے کہ فلم کو کم سے کم بجٹ میں دو سے تین کروڑ میں مکمل کرلیں ۔آگے دیکھئے کیا ہوتا ہے۔اس فلم کی ہدایتکار احتشام الدین دے رہے ہیں ۔دم مستم محبت ، خواب اور نئے عزم کچھ کرگزرنے کی لگن پر مشتمل ہوگی ، اس میں فلم شائقین کو رومانس ، ڈرامہ ، کامیڈی ، ٹریجڈی، میوزک الغرض یہ ایک مکمل فلمی پیکچ پر بنائی جانے والی فلم ہے اداکارہ و ڈرامہ نگار امر خان سے اسکرپٹ لکھوایا گیا ہے اور ہم دونوں نے مل کر اس پر کام کیا ہے۔فلم گھگھی کی ہیروئن اس فلم کی بھی ہیروئن ہیں۔ عمران اشرف ہیرو ہیں ۔یہ ان دونوں کی پہلی فلم ہے۔

دنیا: کسی کہانی کا انتخاب کرتے وقت کون سی بات پیشِ نظر ہوتی ہے؟

عدنان:شروع دن سے یہ تہیہ کیا ہوا ہے کہ اپنے پروڈکشن ہاؤس سے مختلف اور کلاسیک چیز پیش کروں گاتاکہ ہمارا نام معیاری ڈراموں کے حوالے سے خاص مقام بنائے۔ یہی وجہ ہے کہ ابھی تک اچھوتے و منفرد عنوانات پر دھیان دیا ہے ۔

 دنیا:کیا فلم کی کاسٹ میں نئے لوگ بھی شامل ہیں؟

عدنان:جی ہاں! میری عادت ہے کہ نئے چہروں کو چانس دینے میں کبھی نہیں ہچکچاتا ۔ٹی وی ڈرامہ سیریل میں گگھی میں بھی تین باصلاحیت نوجوانوں کو انٹروڈیوس کرایا تھا۔ان میں سے ایک نے ایکٹنگ میں اور دو نے میوزک میں اپنی صلاحیتوں کا اظہار کیا تھا۔ہم نے ہمیشہ نئے ٹیلنٹ کو پروموٹ کیا ہے۔فلم کی شوٹنگ لاہور میں ہوئی ہے ۔ہم نے منہ اندھیرے اپنا کام کیا تاکہ اس دور کے ماحول کو پیش کیا جا سکے کیونکہ صبح ہی صبح لوکیشن پر لوگ نہیں ہوتے لہٰذا ہم نے آسانی سے کام کیا۔  

 دنیا: پہلی بھارتی فلم میں کام کرتے ہوئے خود پر کسی بھی قسم کا کوئی دباؤ محسوس ہوا تھا؟

عدنان: اداکاری کی دنیا میں تین دہائیوں سے زیادہ کا عرصہ گزار چکا ہوں ۔ بولی وڈ مووی میں کام کرتے ہوئے یہ نہیں سوچا کہ شاہ رخ خان یا فواد خان بننا ہے کیو نکہ عمر کے جس حصے میں ہوں ،اس میں ہاٹ فلمی ہیرو نہیں بن سکتا البتہ خود کو عرفان خان کے ٹائپ کا بنانا چاہتا ہوں کسی حد تک اس میں کامیاب بھی رہا ہوں۔

دنیا:آئندہ کے پروجیکٹس کے بارے میں کچھ شیئر کرنا چاہیں گے؟

عدنان: بہت کچھ پلان کررکھا ہے اور کئی سیریلز شیڈول ہیں اس کے علاوہ ایک اور فلم پائپ لائن میں ہے تاہم اس پر ابھی بہت سا کام باقی ہے سو اس بارے میں زیادہ نہیں بتا سکتا ۔

دنیا: ایکٹنگ ورلڈ میں دو دہائیاں گزار چکے ہیں،اپنے اس سفر کو کس طرح دیکھتے ہو؟

عدنان:کیریئر سفر بہت عمدہ رہا ہے۔ اس دوران کئی اچھے سیریلز اور ڈرامے منظرعام پر آئے اور لوگوں نے مجھے بطور ایکٹر ناصرف قبول کیا بلکہ اپنی پسندیدگی سے بھی نوازا!عروسہ‘ سے یہاں تک کا سفر کامیابیوں سے عبارت ہے۔ اس سفر پر جب نظر ڈالتا ہوں تو خود پر فخر ہوتا ہے کہ اس دوران اپنی صلاحیتوں کا خوب اظہار کیا ۔بے حد خوشی ہوتی ہے کہ ٹی وی ورلڈ کا واحد ایکٹر ہوں جسے ہالی وڈ کوئن انجلینا جولی کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا ہے‘ اس پر جتنا فخر کرو ں کم ہے۔ میں اس تجربے کو سیکھنے کی نظر سے دیکھتا ہوں کہ وہاں کی انڈسٹری سے بہت سی نئی چیزیں لے کر آیا ہوں اور اب انہیں اپنے یہاں اپلائی کرنے کی کوشش کروں گا!ان لوگوں کی خاص بات یہ ہے کہ ان کے آئیڈیاز بولڈ اور سوچ وسیع ہے، ہم نت نئے موضوعات پر فلمیں و ڈرامہ بناکر ان کا مقابلہ کر سکتے ہیں اور ہماری انڈسٹری آگے بڑھ سکتی ہے ۔اس بات کو بھی نظرانداز نہیں کیا جاسکتا کہ ہم لوگ مختلف پابندیوں میں جکڑے ہوئے ہیں اور ہر قسم کے موضوع پر طبع آزمائی نہیں کرسکتے کیونکہ ہمارا سماج ابھی اس قسم کی چیزوں کو افورڈ نہیں کرسکتا ۔

دنیا: ماڈلنگ سے ایکٹنگ کی جانب آئے تو کس قسم کے چیلنجز کا سامنا کرنا پڑا؟

عدنان:ماڈلنگ و ایکٹنگ دو الگ الگ چیزیں ہیں لہٰذا اگر کوئی ماڈلنگ میں کامیاب ہے تو ضروری نہیں کہ ایکٹنگ میں بھی اسے ایسی ہی کامیابیاں ملیں سو اس حوالے سے خود کو بہت زیادہ خوش قسمت سمجھتا ہوںکہ ماڈلنگ میں انجوائے کرنے کے بعد جب ایکٹنگ ورلڈ میں قدم رکھا تو پہلی ڈرامہ سیریل عروسہ‘ سے جس قسم کی پسندیدگی حاصل ہوئی‘ وہ زبردست تھی جو اس بات کا ثبوت تھا کہ لوگوں نے مجھے ایکٹر کے طور پر بھی قبول کیا تاہم ایکٹنگ بچوں کا کھیل نہیں‘ اس کا اندازہ پہلی ہی سیریل میں ہوگیا مگر اس مشکل کام سے گھبرانے کی بجائے اس میں مہارت حاصل کی اور ان تمام چیلنجز کو فیس کیا جو راستے میں آتے چلے گئے یوں خود کو ایک اچھا ایکٹر منوانے میں کامیاب ہوپایا۔

 دنیا: حکومت سے کوئی مدد فلم انڈسٹری کے حوالے سے مانگنا چاہئیں گے؟

عدنان: آج کے فلم میکر کو جو سہولیات میسر ہیں پہلے کبھی نہ تھی ، پرانے لوگوں کو دوبارہ فیلڈ میں آنا چاہیے ، اور نئے لوگوں کے ساتھ فلم بنانی چاہئے اسی طرح انڈسٹری پھر سے ترقی کرسکے گی ، سینما انڈسڑی کی ترقی کے لئے ہمیں زیادہ سے زیادہ فلمیں بنانا ہوں گی،2020 ء میں فلم شائقین کو بہت اچھی فلمیں دیکھنے کو ملیں گی ۔

 

گذشتہ شماروں سے پڑھیں

 شوبز انڈسٹری میں بدلتے رحجان کے ساتھ فنکاروں کی سوچ میں بھی تبدیلی کا عنصر بڑھتا جارہا ہے ، وقت نے کروٹ بدلی ہے ،کل تک کے شوبز کی دنیا کے دیوانے اب کیمرے کی چکا چوند سے دور ہوتے نظر آرہے ہیں ۔    

مزید پڑھیں

  ماریہ واسطی نے 25 برس قبل اپنے فنی کیریئر کا آغا ز پی ٹی وی سے کیا، بانو قدسیہ کے ڈرامے ’’کلو ‘‘سے شہرت پائی۔    

مزید پڑھیں

مونا لیزا نے سارہ لورین کے نام سے ٹی وی ڈراموں میں عمدہ پرفارمنس کے ذریعے جو شہرت پائی ۔اس کا چرچا بولی ووڈ تک پہنچ گیا جہاں سنی دیول کی بطور ہیر و فلم ’’قافلہ ‘‘ میں سارہ لورین نے 2007 میں پہلی بار کسی بھارتی فلم میں کام کیا ،    

مزید پڑھیں