☰  
× صفحۂ اول (current) دین و دنیا دنیا اسپیشل طب رپورٹ فیشن سنڈے سپیشل کچن کی دنیا متفرق کھیل خواتین روحانی مسائل
خواتین کیلئے مفید مشورے

خواتین کیلئے مفید مشورے

تحریر : نجف زہرا تقوی

10-27-2019

قالین کے داغ ،با آسانی صاف

گھر میں چھوٹے بچے موجود ہوں تو اکثر قالین پر داغ دھبے پڑ جاتے ہیں۔جنہیں صاف کرنے کے لیے آپ ڈٹرجنٹ کی مدد لیتی ہیں،کچھ داغ تو سرف سے صاف ہو جاتے ہیں،جبکہ کئی ضدی داغ ہزار کوششوں کے باوجود پوری طرح نہیں مٹتے اور اپنا رنگ چھوڑ جاتے ہیں۔جن کی وجہ سے ایک سال پہلے خریدا گیا قالین بھی پرانا اور بے رونق لگنے لگتا ہے۔

اگر قالین بہت قیمتی ہو تو عموماً خواتین وہیں سے ڈرائی کلین کروانے کو ترجیح دیتی ہیں جہاں سے خریدا گیا ہو۔مہنگے قالین کے لیے بہتر بھی یہی ہوتا ہے کیونکہ انہیں ٹوٹکوں کی نذر کرنا ہر گز دانشمندی نہیں ہے،لیکن اگر آپ کا قالین زیادہ مہنگا نہیں ہے یا سیکنڈ ہینڈ یعنی استعمال شدہ ہے تو اس پر لگنے والے کسی بھی قسم کے داغ کو با آسانی گھر پر صاف کیا جاسکتا ہے۔اس کے لیے گھر میں موجود مختلف اشیاء کی مدد لی جا سکتی ہے۔سرکہ تقریباً ہر گھر میں ہی پایا جاتا ہے۔یوں تو اس کے بے شمار فوائد ہیں لیکن خاص طور پر صفائی کے لیے یہ بے حد مدد گار مانا جاتا ہے۔سرکے کی مدد سے داغ صاف کرنے کے لیے طریقہ استعمال کچھ یوں ہے۔ایک پیالے میں دو کھانے کے چمچ نمک اور آدھا کپ سفید سرکہ ڈالیں۔ان دونوں چیزوں کو اچھی طرح ملا کر داغ والے حصے پر لگائیں۔جب یہ سوکھ جائے تو قالین صاف کرنے والی مشین کی مدد سے رگڑ کر صاف کر لیں۔ قالین پر لگا دھبہ اس طرح صاف ہو جائے گا جیسے کبھی تھا ہی نہیں۔اگر داغ گہرا ہو تو اسی مکسچر میں دو کھانے کے چمچ بوریکس پائوڈر شامل کر کے اس مکسچر کو اسی طرح داغ دھبے والی جگہ پر لگا دیں،اور سوکھنے پر ویکیوم کلینر سے صاف کر لیں۔قالین پر زیادہ تر کیچڑ یا مٹی کے داغ لگ جاتے ہیں۔انہیں صاف کرنے کے لیے پیالے میں ایک کھانے کا چمچ سرکہ اور ایک کھانے کا چمچ میدہ ڈال کر پیسٹ بنا لیں۔اس پیسٹ کو کسی سوتی کپڑے پر لگا کر داغ والی جگہ پر ملیں اور دودن تک اس پیسٹ کو لگا رہنے دیں۔دو دن بعد تنکے والی جھاڑو یا سخت دندانوں والے برش یا ویکیوم کلینر کی مدد سے صاف کر لیں۔داغ بالکل مٹ جائیں گے۔ گھروں میں جب رنگ روغن ہو رہا ہو تو عام طور پر ہم سب سے پہلے قالین لپیٹ کر ایک کونے میں رکھ دیتے ہیں،یا کسی کاغذ اور پلاسٹک کی شیٹ سے بھی ڈھکا جا سکتا ہے۔تاہم اگر کبھی بے احتیاطی ہو جائے اور پینٹ کا داغ دھبہ قالین پر لگ جائے تو ڈیڑھ چمچ ڈٹرجنٹ پانی میں ملا کر کسی صاف اسفنج کی مدد سے دھبے والی جگہ پر لگائیںاور رگڑ لیں،بعدمیں کسی صاف کپڑے کو ٹھنڈے پانی سے دھو کر اس جگہ پھیریں۔ایک سے دو مرتبہ یہ عمل دہرانے سے ڈٹرجنٹ کے ساتھ ساتھ داغ بھی دور ہو جائے گا۔بچے اکثر چیز اپنے ہاتھ میں پکڑ کر کھانے کی ضد کرتے ہیں ۔ایسے میں اگر وہ فروٹ کھا رہے ہوں تو ان سے لازمی جوس ٹپک کر نیچے گر تا ہے جو آپ کے قالین کو داغ دار بھی کر سکتا ہے۔پھلوں کے جوس کا دھبہ صاف کرنے کے لیے ڈیڑھ چمچ سفید سرکے میں ایک چمچ واشنگ پائوڈر گھول کر قالین پہ لگائیں۔جب سوکھ جائے تو برش کی مدد سے صاف کر لیں۔اسی طرح چائے یا کافی کے دا غ بھی صاف کیے جا سکتے ہیں۔قالین پر لگے داغ دھبے صاف کرنے کے لیے کلیئر امونیا بھی بے حد موثر ہے۔ایک کپ کلیئر امونیا میں دو لیٹر نیم گرم پانی شامل کریں۔اسے قالیں پر اچھی طرح لگائیں اور سوکھنے کے لیے چھوڑ دیں۔جب سوکھ جائے تو دوبارہ لگائیں۔گہرے داغ صاف کرنے کے لیے تین سے چار بار اس کا استعمال کریں۔ انک،بال پوائنٹ یا پین کی سیاہی سے قالین پر داغ پڑ جائے تو اسے مٹانے کے لیے میدہ بے حد مفید ہے۔استعمال کے لیے تھوڑے سے دودھ میں میدہ ملا کرپیسٹ نما بنا لیں۔اس پیسٹ کو دھبے پر لگائیں اور چند منٹ لگا رہنے دیں،پھر برش کی مدد سے صاف کر لیں داغ مٹ جائے گا۔جب گھروں میں چھوٹے بچے ہوںتو خواتین بخوبی جانتی ہیں کہ لاکھ کوشش کے باوجود گھر قالین اور صوفوں کو داغ دھبوں سے محفوظ رکھنا ممکن نہیں ہوتا۔ چھوٹے بچے اکثر کہیں بھی قے کر دیتے ہیں یا منہ سے دودھ گرا دیتے ہیں۔اسے صاف کرنے کے لیے بیکنگ سوڈا بہترین انتخاب ہے۔دودھ یا قے کے داغ پر بیکنگ سوڈا ڈال کر سوکھنے دیں۔اس کے بعد تولیہ رکھ کر دبائیں۔جب سوکھ جائے تو صاف کر لیں۔یہ داغ صاف کرنے کے ساتھ ساتھ بو کو بھی دور کر دے گا۔قالین پر چیونگم چپک جائے تو اس پر آئس کیوبز پھیر لیں اور پھر چھری کی مدد سے چیونگم کو ہٹا لیں۔آئس کیوبز کے ساتھ ڈرائی کلیننگ پائوڈر یا مکسچر بھی رگڑ کر قالین سے چیونگم صاف کی جا سکتی ہے۔نیل پالش کا داغ مٹانے کے لیے کسی سوتی کپڑے کو نیل پالش ریموور میں بھگو کر اس جگہ رگڑیں۔ دو سے تین بار یہ عمل دہرانے سے داغ صاف ہو جائیں گے۔قالین پر لگے مختلف قسم کے داغ صاف کرنے کے لیے ٹو تھ پیسٹ اور ہائیڈروجن پر آکسائیڈ کا مکسچر بھی فائدہ مند ہے۔

3 اہم اصول ،شفاف جلد اصول

یہ تو درست ہے کہ خواتین اپنی جلد کے بارے میں ہمیشہ سے فکر مند رہی ہیں،لیکن بعض اوقات کم علمی یا نا تجربہ کاری کی وجہ سے چند ایسی غیر ضروری کاسمیٹکس یا پراڈکٹس بھی استعمال کر لیتی ہیں جن کے استعمال سے اچھی بھلی صحت مند جلد بھی متاثر ہو جاتی ہے،اور یہ سب کم علمی کی بناء پر ہوتا ہے۔انسان کی جلد شخصیت کا سب سے اہم حصہ کہلاتی ہے اور شخصی تاثر میں بھی اہم ترین کردار ادا کرتی ہے۔کھلی فضا میں جلد کی صحت اور خوبصورتی کے دو عناصر اس کے بد ترین دشمن کہلائے جا سکتے ہیں جن میں سورج کی تیز روشنی اور گردو غبار شامل ہیں۔ان کے علاوہ مختلف چھوٹے چھوٹے مسائل بھی جلد کی صحت کو متاثر کرتے ہیں۔ان میں تمام جسم کو غیر صحت مند رکھنے والی وجوہات مثلاً ذہنی دبائو،الجھن اور غیر متوازن غذائیں شامل ہیں۔

جلد کی خوبصورتی کے لیے ایک اہم ترین نقطہ یہ بھی ہے کہ جلد کی حفاظت کم عمری سے ہی شروع کر دی جائے،لیکن اکثر ہم جلد کی حفاظت شروع ہی تب کرتے ہیں جب اس میں واضح خرابی محسوس کرتے ہیں۔جلد کی خوبصورتی کے لیے جوانی کی عمر سب سے بہترین عرصہ ہے کیونکہ اگر اس عمر سے ہی جلد کی حفاظت اور اس کے معاملات پر توجہ دی جائے تو اس نازک عمر کے بعد تمام عمر جلد اپنی خوبصورتی برقرار رکھتی ہے۔اس کے علاوہ آپ عمر کے چاہے کسی بھی حصے میں کیوں نہ ہوں تین اہم اصولوں کو اپنا کر آپ اپنی صحت کو ہمیشہ خوبصورت اور شفاف رکھ سکتے ہیں۔

بہترین خوراک کھائیں: اس سے یہ مراد ہر گز نہیں کہ زیادہ مقدار میں اور جو جی میں آئے وہ کھا لیا جائے،کیونکہ اگر آپ جلد کو سدا خوبصورت رکھنا چاہتی ہیں تو پھر اپنے دل کی بجائے دماغ کی سنیں۔بعض اوقات ہم بہت سی ایسی چیزیں کھاتے ہیں جو ذائقے میں تو مزیدار ہوتی ہیں لیکم ہماری جلد کے لیے نقصان کا باعث بنتی ہیں مثلاً تلی ہوئی اورتیز مصالحوں والی اشیاء کھانے سے جس حد تک ہو سکے پر ہیز کریں۔اگر کھانے کو دل کرے بھی تو کوشش کریں کہ گھر میں بنا کر کھا لیں۔

زیادہ پئیں: پانی جسم میں جا کر نظام کو ترو تازہ کرتا ہے۔ڈاکٹروں کے مطابق روزانہ تقریباً دس سے بارہ گلاس پانی پینا صحت اور جلد کے لیے بے حد ضروری ہے۔انتہائی خشک موسم میں بھی اس مقدار میں پانی پینے سے جلد کی تمام بیماریوں سے بچا جا سکتا ہے۔خشک موسم میں خنک ہوائیں جلد سے پانی ختم کر دیتی ہیں،اور ایسے میں جلد کو تازگی عطا کرنے کے لیے وافر مقدار میں پانی درکار ہوتا ہے۔پانی کے زیاد ہ استعمال سے جلد کی نمی بھی برقرار رہتی ہے۔

مکمل نیند: نیند کی کمی نہ صرف آنکھوں کی خوبصورتی زائل کر دیتی ہے بلکہ جلد کی تازگی بھی برقرار نہیں رہتی۔اس کے باعث آنکھوں کے گرد سیاہ حلقے پڑنے لگتے ہیں اور تمام جسم بھی سستی کا شکار رہتا ہے۔ماہرین کے مطابق جسم کی طرح جلد کو بھی سکون اور آرام درکار ہوتا ہے جو جلد کو بھر پور نیند لے کر دیا جا سکتا ہے۔

میک اپ ٹپس

میک اپ میں زیادہ مہارت نہ رکھنے والی خواتین اکثر کشمکش کا شکار ہوتی ہیں کہ کس طرح کے لبا س کے ساتھ کون سے رنگ میک اپ میں مناسب لگیں گے۔ذیل میں پارٹی لباس کے ساتھ میک اپ کے حوالے سے کچھ ضروری ٹپس موجود ہیں ،یقینا یہ آپ کے لیے مدد گار ثابت ہوں گی۔گلابی رنگ کے لباس کے ساتھ اگر آپ کے چہرے کی رنگت ہلکی ہے تو لائٹ اور نیوٹرل رنگوں کا استعمال کریں۔ہلکی سی چمک دمک والے رنگ آپ کے چہرے کے لیے مناسب رہیں گے۔کاجل لگا کر آنکھوں کو نمایاں کریں۔ہونٹوں کے لیے پرنٹ کے حساب سے شیڈ کا انتخاب کریں۔اگر پرنٹ گلابی ہو تو پرپل شیڈ اور ساتھ لپ گلوس کا استعمال کریں۔اگر جلد کی رنگت درمیانی ہے تو سرخ سے ذرا ہلکا شیڈ مناسب رہے گا۔زیادہ شوخ رنگ استعمال کرنے سے گریز کریں ورنہ آپ کی شخصیت متاثر کن نہیں لگے گی۔لباس میںاگر کئی رنگ موجود ہوں تو ان کی مناسبت سے شیڈ منتخب کریں۔آپ ہلکا سرخ رنگ یا خوابنی کے رنگوں والی لپ سٹک استعمال کر سکتی ہیں۔اگر آپ کا لباس شمپئن رنگ کا اور چہرے کی رنگت ہلکی ہے تواسی کی مناسبت سے آئی میک اپ کریں۔گولڈ،بھورا مائل یاشیمپئن شیڈ ٹھیک رہے گا۔ہونٹوں پر ہلکی لپ سٹک یا لپ گلوس لگائیں۔روشن گلابی اور شوخ رنگوںاستعمال کرنے سے گریز کریں۔درمیانی رنگت والی خواتین آئی میک اپ کے لیے برائون،کاپر اور ونیلا شیڈ استعمال کریں۔ہونٹوں پر گولڈ شیڈ گلوس یا برونز کپ سٹک لگائیں۔آپ جس قدر نیچرل کلر استعمال کریں گی اتنا ہی آپ کی شخصیت میں نکھار آئے گا۔سرخ اور ڈراک برائون شیڈ ہر گز استعمال مت کریں۔گہری رنگت والی خواتین کے لیے خاکستری شیڈ آئی میک اپ کے لیے ٹھیک رہے گا،مثلاً برائون یا برونز رنگ۔اس کے علاوہ ہونٹوں کے لیے گہرے رنگوں کا استعمال کریں۔اگر آپ پارٹی میں لال رنگ کا لباس زیب تن کر رہی ہیں اورآپ کے چہرے کی رنگت ہلکی ہے توآئی میک اپ کے لیے کریمی شیمپئن شیڈ لگائیں اور برائون لائنز کا استعمال کریں۔اس کے بعد ہونٹوں پر ہلکی لپ سٹک لگا کر اوپر سرخ گلوس لگا لیں۔درمیانی رنگت والی جلد کے لیے بھی پپوٹوں پرکریمی شمپئن آئی شیڈو لگائیں اور لائنر کی جگہ سیاہ رنگ کی باریک لائن لگائیں۔ہونٹوں پر من پسند رنگ کا گلوس استعمال کیا جا سکتا ہے۔پارٹی کے لیے سرخ رنگ کا انتخاب کرنے والی گہری رنگت کی خواتین کو چاہیے کہ آنکھوں پر بلیک لائنر کے ساتھ برائون آئی شیڈکا استعمال کریں۔لپ سٹک کے لیے بھی ملتے جلتے رنگوں کا انتخاب کریں۔اگر آپ فنکشن میں سیاہ رنگ پہننا چاہتی ہیں اور آپ کی رنگت ہلکی ہے توپلکوں کا خاص میک اپ کریں۔یہ گہری اور کالی نظرآنی چاہیے۔جبکہ آئی شیڈ ہلکے رنگ کا استعمال کریں۔ہونٹوں پر سرخ یا پھر گلابی شیڈ لگائیں۔آپ کے لباس اور شخصیت میں واضح نکھار آئے گا۔درمیانی رنگت والی خواتین رنگین آئی لائنر ٹرائی کریں۔پہلے پلکوں کو ہلکا سا موڑ کر ان پہ شمپئن کلر لگائیں۔اپنی سکن کے مطابق لپ سٹک کا انتخاب کریں بعد میں گولڈن گلوس کا ہلکا سا ٹچ دے کر تیاری مکمل کریں۔

ٹوٹکے

روزانہ صبح لہسن کے دو جوئے اور ایک چائے کا چمچ شہد کھانے سے بلڈ پریشر بالکل نارمل رہتا ہے۔

شہد کو سرکہ میں گھول کر کُلیاں کرنے سے دانت اور مسوڑھے مضبوط ہو جائیں گے۔

اکثر ٹماٹر کی قیمت آسمان سے باتیں کرنے لگتی ہے ایسے میں جب سستے داموں مل رہے ہوں تو تب زیادہ خرید لیں،اور گرائنڈ کر کے فریزر میں برف جمانے والی کیوب ٹرے میں جما لیں۔اس کے بعد تھیلے میں نکال کر رکھ لیںبعد میں جتنا استعمال کرنا ہو کیوب کی شکل میں ڈال دیں تازہ ٹماٹر کا ذائقہ ملے گا۔لیموں سستے ہوں تو انہیں بھی آپ اسی طرح فریز کر کے ا ستعمال کر سکتی ہیں۔

آلو قیمہ پکائیں تو اسے اتارنے سے پہلے اس میں آدھی گٹھی ہرا دھنیاکاٹ کر ڈال دینے سے مصالحے دار بریانی کی خوشبو آئے گی۔

اگر کپڑے پر ہلدی کا داغ پڑ جائے تو متاثرہ حصے کو لیموں کے رس سے تر کریں اور کچھ دیر بعد اسے صابن سے دھو لیں تو داغ غائب ہو جائے گا۔

استری کے جلنے کا نشان پڑ جائے تو متاثرہ حصے پر ٹشو پیپر رکھ کر اس پر دو قطرے ہائیڈڑوجن پر آکسائیڈ ٹپکائیں۔اب گیلی حالت میں ہی اس کاغذ کے اوپر استری پھیریں داغ دور ہو جائے گا۔

بعض اوقات جوتا پڑے پڑے تنگ ہو جاتا ہے۔آپ فلالین کے کپڑے کو گرم پانی میں بھگو کر نچوڑلیں اور گرم گرم جوتے کے اندر ٹھونس دیں۔کپڑے کی گرمی کی وجہ سے جوتا پھیل جائے گا اور اس کی تنگی دور ہو جائے گی۔

بسکٹ ،نمکو یا چپس وغیرہ کو خستہ رکھنے کے لیے جار کی شکل کے پلاسٹک کے ڈبوں میں رکھ دیں تو یہ نرم اور خراب نہیں ہو ں گے۔

فریج سے کسی بھی قسم کی بد بو دور کرنے کے لیے ایک پیالی میں سرکہ لے کر فریج میں رکھ دینے سے بد بو دور ہو جائے گی۔

اگر سالن میں مرچیں زیادہ پڑ جائیںتو اس میں گرم مصالحہ سارا نہ ڈالیں بلکہ صرف دار چینی،سفید زیرہ،بڑی الائچی اور ایک عدد لونگ پیس کر ڈال دیں۔سیاہ زیرہ اور سیاہ مرچ نہ ڈالیں۔جب خوشبواٹھے تو مناسب مقدار میں گھی نتھار لیں۔

خوب محنت یا چلنے سے تھکن طاری ہو جائے تو ٹھنڈے پانی میںبیس گرام گُڑ اور الائچی کے دانے پیس کر ملا کے پی لیں۔اس سے تھکن دور ہو جائے گی اور قوت بحال ہو گی۔

آلو اُبالتے وقت پانی میں چُٹکی بھر نمک ملا دیں،آلو جلدی گل جائیں گے اور برتن بھی سیاہ نہیں ہو گا۔

ٹوتھ پیسٹ اور میٹھے سوڈے کو یکساں مقدار میں لے کر ملا لیں،پھر ریفریجر یٹر کے تمام حصوں میں پیلے رنگ کے دھبوں پر رگڑ کے صاف کر لیں۔ریفریجریٹر کے تمام نشانات ختم ہو جائیں گے۔

اکثر لوگوں کی محنت طلب کام کرتے وقت سانس پھولنے لگتی ہے تو ان کے لیے آزمودہ نسخہ ہے کہ کریلے کے پانی میں تھوڑا سا شہد ملا کر کھائیں ،پھر دار چینی کا پائوڈر بنائیں اس میں بھی شہد ملا کر کھانے سے سانس نہیں اکھڑے گی۔

گذشتہ شماروں سے پڑھیں

استعمال کے بعد رنگ کرنے کے برش کو صاف اور نرم رکھنے کے لیے تھوڑے سے سرکہ میں بھگو دیں،دس منٹ بعد صابن اور گرم پانی سے دھوئیں بالکل نئے ہو ج ...

مزید پڑھیں

سبزیاں قدرت کے انمول تحفوں میں سے ایک ہیں۔سبزی چاہے کوئی بھی ہو اس کا استعمال انسانی صحت پر مثبت اثرات مرتب کرتا ہے ۔سبزیوں کا استعمال نہ ...

مزید پڑھیں

دل کی دھڑکن ہی انسان کے زندہ ہونے کا ثبوت ہے۔یہ رک جائے تو بشر بھی خاک میں جا لیٹتا ہے۔انسانی جسم میں دل و دماغ وہ دو عضو ہیں جو سب سے اہم س ...

مزید پڑھیں